Shaheed e Karbala Uswa e Hussaini Book Pdf Free Download. Join Free. Possible Universal Themes in Literature. This book is now available for visitors to read in a PDF document on the Pakistan Virtual Library.

Imam Hussain took his family and companions to Kufa. I don't have a Facebook or a Twitter account. Waqia-e-KARBLA ka HAQEEQI Pas-Manzer by Engineer Muhammad Ali Mirza PDF FREE DownloadFree download and Read Online in PDF format. Brought to you by. Islamic Occasions Events of Karbala Book PDF - Story of Karbala. Allama Sayyid Murtaza Askari. Shop Collection. In his brilliant writing career, he authored some great books, and this writing is one of them. happy kids. Waqia Karbala tareekh ke aine me - Urdu Book - Free download as PDF File . ... Shadi ki Raat by Abdul Hadi Abdul Khaliq Madani. Brought to you by Islamic Research Foundation - visit our blog http://islamic-research-foundation.blogspot.com/ and visit our facebook page http://www.facebook.com/islamic.reseach.foundation, 85% found this document useful (26 votes), 85% found this document useful, Mark this document as useful, 15% found this document not useful, Mark this document as not useful, Save Waqia Karbala tareekh ke aine me - Urdu Book For Later. In his novella Heart of Darknes. Addeddate 2015-10-16 13:57:16 Identifier WaqiaKarbalaUrduPdfbooksfree.pk Identifier-ark ark:/13960/t4nk7297j Ocr ABBYY FineReader 11.0 … Notify me of follow-up comments by email. Books on karbala in urdu pdf - Kufr e Yazeed by Iftikhar Ul Hassan Pdf Free Download Kufr e Yazeed book the life of Yazeed and his rule behind the tragedy of Karbala in Urdu language. Waqia Karbala tareekh ke aine me - Urdu Book - Free download as PDF File . Brought to you by Islamic Research Foundation ... Shia Books For Download. Moreover, he got the invitation from the people of Iraq to lead the movement against the rule of Banu Ummayyad. Reuters Prentice Hall. Imam Hussain and Waqia Karbala Pdf Urdu Book Free Download, Namal by Nimra Ahmed Complete Urdu Novel Pdf Free Download, Ye Chahatain Ye Shiddatain Complete Urdu Novel Free Download, Behtareen Inami Taqreerain Pdf Urdu Book Free Download, Koka Shastra Kashmiri Book In Urdu Free Pdf Download, Shah Jo Risalo in Sindhi Pdf Book download - Hazrat Shah Abdul Latif Bhittai, Jannat Kay Pattay by Nimra Ahmed Urdu Novel Free Download, Saltanat-e-Usmania Pdf Urdu Book Free Download, Inam Yaafta Taqreerain Pdf Urdu Book Free Download, Cheh Sata by Ustad Bukhari Poetry Sindhi Shayari Pdf Book Free Download, Aab-e-Hayat by Umera Ahmed Novel Pdf Urdu Book Free Download, Shah Jo Risalo in Sindhi Pdf Book download - Hazrat Shah Abdul Latif BhittaI, Mushaf by Nimra Ahmed Urdu Novel Pdf Free Download, Haalim By Nimra Ahmed Urdu Novel PDF Free Download | Read Online. The Conspiracy against the Human Race? Home. All Rights Reserved. pdf), Text File .txt) or read online for free. Sign up with Facebook Sign up with Twitter.

data communication multiple choice questions with answers pdf, Data communication multiple choice questions with answers pdf. This book is titled "Imam Hussein and Waqiya Karbala", which is the best and most authentic book ever written on the tragedy of Karbala in Urdu.

Zavia By Ashfaq Ahmed i... چھوٹی بہن کا پگلا بھائی از عنایت اللہ Choti Behan Ka Pagla Bhai Novel Introduction Choti Behan Ka Pagla Bhai urdu book is written... online reading urdu amliat book which have content of ilm e jafar and their practical information, Karbala Ka Khooni Manzar By Maulana Muhammad Ilyas Attar Qadri Razavi, featuredpost/urdu_books,English Books,History Novels, -mtab/Romantic Novels,Safar Namay,Shikariyat Books,Social Story Book,Tasawuf Book,Translated Books,Tutorial Books,Urdu Adab,urdu_books, امام حسین اور واقعہ کربلا از حافظ ظفراللہ شفیق, Please Enable Javascript To See All Widget, Free Urdu Books Downloading, Islamic Books, Novels, bharat or amrica Pakistan kay Dost ya Dushman by Agha Meer Hussain. api-3782112. Replies. Blog. Imam Hussain Aur Waqia Karbala is telling about the incident of shahadat imam hussain in karbala.

Books on karbala in urdu pdf - Kufr e Yazeed by Iftikhar Ul Hassan Pdf Free Download Kufr e Yazeed book the life of Yazeed and his rule behind the tragedy of Karbala in Urdu language. This book is one of the best collections in Islamic books. Brought to you by. I hope you like to read the book Imam Hussain Aur Waqia Karbala Pdf and share it with your friends. Here you can download Urdu books on Waqia Karbala in pdf. Shop Collection. The author name of this book is Hafiz zafar allah Shafiq. Try Business. دیہات و بلاد میں متفرق ہو جاؤ، یہاں تک کہ اللہ تعالی بلا ٹالے، دشمن جب مجھے پائیں گے تمہارا پیچھا نہیں کریں گے۔” یہ سن کر امام کے بھائیوں صاحبزادوں بھتیجوں اور عبداللہ بن جعفر کے بیٹوں نے عرض کی کہ ” ایسا ہم کس لیے کریں؟ اس لیے کہ آپ رضی اللہ تعالی عنہ کے بعد زندہ رہیں؟ اللہ عزوجل ہمیں وہ منہوس دن نہ دکھائے کہ آپ نہ ہوں اور ہم زندہ رہیں”eval(ez_write_tag([[250,250],'urdunotes_com-large-mobile-banner-1','ezslot_11',605,'0','0'])); یہاں تک کہ ابن سعد نے اپنے لشکر کے ساتھ امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ اور آپ کے رفقاء پر حملہ کر دیا۔ آپ کے رفقاء و احباب و برادران و شہزادگان ایک ایک کر کے شہید ہوتے چلے گئے۔ تقریبا 50 سے زائد افراد شہید ہو گئے اور بالآخر حضرت امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کو بھی بڑی بےدردی کے ساتھ شہید کر دیا گیا۔, یزید بن معاویہ ابو خالد اموی وہ بدبخت شخص ہے جس کی پیشانی پر اہل بیت کرام علیہم الرضوان کے بے گناہ قتل کا سیاہ داغ ہے۔ یہی وہ شخص ہے جس پر ہر زمانے میں پوری دنیا اسلام ملامت کرتی رہی ہے اور قیامت تک اس کا نام حقارت سے لیا جائے گا۔ محرمات سے نکاح اور سود وغیرہ ممنوعات کو بھی اس بے دین نے علانیہ رواج دیا۔ مدینہ طیبہ و مکہ مکرمہ کی بے حرمتی بھی کرائی۔, واقعۂ کربلا کے متعلق کتاب کو یہاں سے ڈاؤن لوڈ کیجئے, How To Become a Successful Person Essay In Urdu, Short Essay On Population Problem In India. سیکس کےبارے میں مسائل Sexual Problems of Mans and Woman's in urdu Sexual Problems By Dr. Syed Mobeen Akhter is an urdu... جنات سیکس اور انسان ازعمران ناگی بی اے۔ جنات کے وظاءف اور لاہور میں جنات کے ٹھکا نے ۔ Jinnat Sex or Insan Book introduction ... پامسٹری کی کتاب تصویروں کے سا تھ    Pamistry Urdu Books Palmistry Book is an Hand Reading pdf book which will tell your h... زاویہ از اشفاق احمد ( مکمل تین حصے ) Itroduction  Urdu Book of Zavia By Ashfaq Ahmed. Scooped by dzbfmnr bkoks dzbfmnr. Research and publish the best content. Post Neoliberalism: Rebuilding and Reclaiming the State in Latin America The new millennium in Latin America has witnessed a series of political transitions from the carnegieendowment. Imam Hussain Aur Waqia e Karbala Book is written by Hafiz Zafarullah Shafeeq who have described the whole happenings in Karbala incident. Meanwhile, he quoted the trustable references in the book. In the 61st year after Hijrah, Hazrat Imam Hussain raised his voice against the rule of Yazid Ibn Muavia. In this book, the authors explain in detail the tragedy of Karbala, one of the most important aspects of Islamic history. I don't have a Facebook or a Twitter account. Find the user manual you need for your audio device and more at ManualsOnline.

Your email address will not be published. حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو دار فنا سے دارالبقاء کی طرف رحلت فرمائے ابھی پچاس برس ہی گزرے تھے کہ 61 ہجری میں عراق شہر کوفہ سے کچھ فیصلے پر ‘کربلا’ کے مقام پر یزید کے لشکر نے فرزندِ رسول حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کو سفر کی حالت میں ان کے اہل و عیال اور رفقاء سمیت شہید کر دیا۔ خلافت راشدہ کا تیس سالہ دور حضرت امام حسن رضی اللہ تعالی عنہ پر مکمل ہوچکا تھا اور پھر بادشاہت کی ابتداء حضرت معاویہ رضی اللہ تعالی عنہ سے ہوئی۔, جب 60 ہجری میں حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کا انتقال ہوا اور یزید ان کا جانشین بنا تب تختِ حکومت پر بیٹھتے ہی اس کے لیے سب سے اہم مسئلہ حضرت سیدنا امام حسینؓ، حضرت سیدنا عبداللہ بن زبیر اور حضرت سیدنا عبداللہ بن عمرؓ سے بیعت لینے کا تھا۔ کیونکہ ان حضرات نے یزید کو امیر معاویہ کا والی عہد تسلیم نہیں کیا تھا۔اس کے علاوہ ان حضرات سے یزید کو یہ بھی خطرہ تھا کہ کہیں ان میں سے کوئی خلافت کا دعویٰ نہ کر دے اور کہیں ایسا نہ ہو کہ سارا حجازمقدس میرے خلاف اٹھ کھڑا ہو، جبکہ امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کے دعویٰ خلافت کی صورت میں، عراق میں بھی بغاوت کا سخت اندیشہ تھا۔, eval(ez_write_tag([[336,280],'urdunotes_com-medrectangle-4','ezslot_3',122,'0','0']));ان وجوہ کی بنا پر یزید کے پیش نظر سب سے بڑا مسئلہ اپنی حکومت کی بقا اور اسے تحفظ دینا تھا، لہٰذا اس نے ان حضرات مقدسہ سے بیعت لینا ضروری سمجھا۔چنانچہ اس نے مدینہ منورہ کے گورنر ولید بن عقبہ کو حضرت سیدنا امیر معاویہ کی وفات کی خبر دی اور ساتھ ہی ان حضرات مقدسہ سے بیعت لینے کے لیے سخت تاکیدی حکم بھیجا۔ولید نے حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کو حضرت سیدنا امیر معاویہ کی وفات کی خبر دی، اور یزید کی بیعت کے لیے کہا۔ آپ رضی اللہ تعالی عنہ نے تعزیت کے بعد فرمایا کہ میرے جیسا آدمی اس طرح چھپ کر بیعت نہیں کر سکتا اور نہ میرے لئے اس طرح چھپ کر بیعت کرنا مناسب ہے۔ اگر آپ باہر نکل کر عام لوگوں کو اور ان کے ساتھ ہمیں بھی دعوت دیں تو یہ مناسب ہوگا۔, eval(ez_write_tag([[300,250],'urdunotes_com-box-4','ezslot_10',126,'0','0']));یزید کی بیعت حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کو قلبی طور پر سخت ناپسند تھی کیونکہ وہ نااہل تھا اور اس کا تقرر بھی خلفائے راشدین کے اسلامی طریقہ انتخاب کے بالکل خلاف ہوا تھا۔ اس لئے آپ احتجاجاً اس کے خلاف تھے اور دوسری طرف حالات اجازت نہیں دے رہے تھے کہ آپ علی الاعلان اس کے خلاف آواز بلند کریں۔ لہذا آپ رضی اللہ تعالی عنہ نے اپنے اہل و عیال اور عزیز و اقارب کو ساتھ لے کر مدینہ منورہ سے مکہ مکرمہ کی طرف ہجرت فرما لی۔ آپ رضی اللہ تعالی عنہ کے مکہ مکرمہ پہنچنے کی خبر سن کر لوگ جوق در جوق آپ کی خدمت میں حاضر ہوکر زیارت کا شرف حاصل کرنے لگے۔, جب اہل کوفہ کو حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ ہو تعالئ عنہ کے انتقال کی خبر ملی اور انہیں اس بات کا علم ہوا کہ حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ نے یزید کی بیعت سے انکار کر دیا ہے تو انہوں نے سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کے نام ہزاروں کی تعداد میں خطوط لکھے کہ آپ جلد از جلد کوفہ تشریف لے آئیے، مسند خلافت آپ کے لیے خالی ہے۔ ہمارے اموال اور ہماری گردنیں آپ کے لئے حاضر ہیں سب کے سب آپ کے منتظر و مشتاق ہیں۔ آپ کے سوا کوئی ہمارا امام و پیشوا نہیں، آپ کی مدد کے لئے یہاں ہزاروں کا لشکر حاضر ہے۔, eval(ez_write_tag([[300,250],'urdunotes_com-banner-1','ezslot_9',125,'0','0']));حضرت امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ نے جب اہل کوفہ کے خطوط میں ان کے جذبات عقیدت و محبت جان و مال قربان کرنے کی تمناؤں اور کوفہ آنے کی التجاؤں کو دیکھا تو فیصلہ کیا کہ حالات معلوم کرنے کے لیے پہلے اپنے چچازاد بھائی حضرت مسلم بن عقیل رضی اللہ تعالی عنہ کو بھیجا جائے۔ چنانچہ آپ نے انہیں اہل کوفہ کے نام ایک خط دیا اور فرمایا کہ آپ کوفہ جا کر بذات خود براہ راست حالات کا صحیح اندازہ لگا کر ہمیں اطلاع دیجئے، اگر حالات سازگار ہو تو میں بھی آ جاؤں گا اور اگر حالات نامناسب ہوں تو آپ بھی واپس تشریف لے آئیے۔, صدر الفاضل حضرت علامہ سید نعیم الدین مراد آبادی فرماتے ہیں کہ اگرچہ امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کی شہادت کی خبر مشہور تھی اور کوفیوں کی بے وفائی کا پہلے بھی تجربہ ہو چکا تھا مگر جب یزید بادشاہ بن گیا تو اس کی حکومت و سلطنت دین اسلام کے لیے خطرہ تھی اور اسی سبب سے اس کی بیعت ناروا تھی اور وہ طرح طرح کی تدبیروں اور حیلوں سے چاہتا تھا کہ لوگ اس کی بیعت کر لیں۔ ان حالات میں کوفیوں کا بپاسِ ملت یزید کی بیعت سے دست کشی کرنا اور حضرت امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ سے طالب بیعت ہونا، امام پر لازم کرتا تھا کہ ان کی درخواست قبول فرمائیں۔ جب ایک قوم ظالم اور فاسق کی بیعت پر راضی نہ ہو اور صاحب استحقاق اہل سے درخواست بیعت کرے، اس پر اگر وہ ان کی استدعا قبول نہ کرے تو اس کے یہ معنی ہوتے ہیں کہ وہ اس قوم کو اس جابر ہی کے حوالے کرنا چاہتا ہے۔ امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہٗ اگر اس وقت کوفیوں کی درخواست کو قبول نہ فرماتے تو بارگاہ الہی عزوجل میں کوفیوں کے اس مطالبہ کا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کے پاس کیا جواب ہوتا کہ "ہم ہر چند درپے ہوئے مگر امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ بیعت کے لیے راضی نہ ہوئے، اسی لئے ہمیں یزید کے ظلم و تشدد سے مجبور ہوکر اس کی بیعت کرنا پڑی، اگر امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ ہاتھ بڑھاتے تو ہم ان پر جانیں فدا کرنے کے لئے حاضر تھے”, یہ مسئلہ ایسا در پیش آیا جس کا حل بجز اس کے اور کچھ نہ تھا کہ حضرت امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ ان کی دعوت پر لبیک فرمائیں۔ اگرچہ اکابر صحابہ کرام حضرت ابن عباس و حضرت ابن عمر و حضرت جابر و حضرت ابو سعید وغیرہ ہم رضی اللہ تعالی عنہم حضرت امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کی اس رائے سے متفق نہیں تھے اور انہیں کوفیوں کے عہدوں مواثیق کا اعتبار نہ تھا، امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کی محبت اور شہادت حضرت امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کے شہرت، ان سب کے دلوں میں اختلاج پیدا کر رہی تھی۔ گو کہ یہ یقین کرنے کی بھی کوئی وجہ نہ تھی کہ شہادت کا یہی وقت ہے اور اسی سفر میں یہ مرحلہ درپیش ہوگا لہذا اندیشہ مانع تھا۔, بہرحال حضرت سیدنا مسلم بن عقیل رضی اللہ تعالی عنہ نے اہلِ کوفہ کی بے پناہ محبت و عقیدت کو دیکھ کر حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کی خدمت میں خط لکھ کر بھیجا کہ ہزاروں افراد نے میرے ہاتھ پر بیعت کر لی ہے اور یہاں کے سب لوگ آپ کی تشریف آوری کے منتظر ہیں۔ امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ نے اس اطلاع کے بعد کوفہ جانے کا عزم صمیم کرلیا اور ادھر کوفہ میں جو فساد برپا ہو چکا تھا اس کی آپ کو اطلاع نہیں ہوئی تھی۔, حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہٗ نے تین ذلحج ساٹھ ہجری کو اپنے اہل بیت و خدام وغیرہ، کل 82 افراد کو ہمراہ لے کر راہِ عراق اختیار فرمائی۔ راستے میں حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کو کوفیوں کی بد عہدی اور حضرت سیدنا مسلم بن عقیل رضی اللہ تعالی عنہ کی شہادت کی خبر مل گئی تھی۔ اس پر امام حسینؓ کے رفقاء کی آراء مختلف ہوئیں اور ایک بار آپ رضی اللہ تعالی عنہ نے بھی واپسی کا قصد فرمایا لیکن بہت گفتگو کے بعد یہی طے پایا کہ سفر جاری رکھا جائے اور واپسی کا خیال ترک کر دیا جائے۔ حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ نے بھی اس رائے سے اتفاق کیا اور قافلہ آگے چل دیا یہاں تک کہ حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ نے کربلا میں نزول فرمایا۔, یہ محرم الحرام 61ہجری کی 2 تاریخ تھی۔ آپ رضی اللہ تعالی عنہ نے اس مقام کا نام دریافت کیا تو معلوم ہوا کہ اس جگہ کو "کربلا” کہتے ہیں۔ حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کربلا سے واقف تھے اور آپ کو معلوم تھا کہ کربلا ہی وہ جگہ ہے جہاں اہل بیت رسالت کو راہ حق میں اپنے خون کی ندیاں بہانی ہوں گی۔ انہی دنوں آپ رضی اللہ تعالی عنہ کو حضور سید عالم صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت ہوئی۔ حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام نے آپ کو شہادت کی خبر دی اور آپ کے سینہ مبارک پر دست اقدس رکھ کر دعا فرمائی "اے اللہ حسین کو صبر و اجر عطا فرما”, پھر ابن زیاد نے حضرت سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کو ایک خط لکھ بھیجا کہ یزید کی بیعت کر لیجیے۔ جب وہ خط آپ رضی اللہ تعالی عنہ کے پاس پہنچا، آپ نے اسے پڑھ کر پھینک دیا اور خط لانے والے قاصد سے فرمایا کہ اس وقت میرے پاس اس کا کوئی جواب نہیں۔ ایلچی نے آکر ابن زیاد کو بتایا تو جواب سن کر ابن زیاد کا غصہ بڑا اٹھا اس نے لوگوں کو جمع کیا فوجیں تیار کی اور ان کا سپہ سالار عمر بن سعد کو بنایا جو ملک رَے کا والی تھا۔ اولاً اس نے پہلو تہی سے کام لیا، اس پر ابن زیاد نے کہا کہ یا تو لڑنے کے لئے تیار ہوجا یا پھر رَے کی حکومت چھوڑ کر گھر بیٹھ جا۔.

Jacob Elordi Girlfriends, Joshua Malina Wife, Batman: Arkham City Invincibility Cheat, How To Join A Zoom Meeting For The First Time On Iphone, Prayer Points For Revival Fire, If I Message Someone On Instagram And Then Block Them, Sir Movie 2018, Zach Cregger Wife, Marin Nicasio Size Chart, Wong Family Crest, Guide Des Tarifs Et Nomenclature Des Actes Buccodentaires 2020, What Happened To Dazey And The Scouts, John Charles Cillizza Obituary, Charlie Dixon Cars, Perimeter 8 Drone Price, Throwing Up 12 Hours After Drinking, Petunias In Florida, Road Accident Northland Today, Is Azan Married To His Cousin, Jetson Bolt Parts, Marianne Mireille Herbstmeyer, What Happened To Channel 58 In Nashville, Celtic Fc Wallpaper For Walls, Advantages And Disadvantages Of Paper And Pencil Assessment, Bmw E46 330ci Specs, Normal Heart Rate By Age, Lego 11011 Vs 10717, Hemlata Bhatt Nanabhai Bhatt, James Redford Wiki, Friedman Doctrine Pros And Cons, Making Cannonballs Osrs, C'est Dernier Temps Ou Ces Derniers Temps, Stickers On Snapchat Names, Estrellita Violin Sheet Music Imslp, Jinxed Cast Baby, Outer Pinion Bearing Removal, Funny Alternative Names For Bridesmaids, Is Iris Really Foley's Daughter In The Samaritan,